ایران جوہری سمجھوتے میں طے پائے ذمے داریوں میں بتدریج کمی لائے گا: آیت اللہ خامنہ ای

ایران کے سپریم لیڈر آیت اللہ خامنہ ای نے کہا ہے ایران جوہری سمجھوتے میں طے پائے ذمے داریوں میں بتدریج کمی لائے گا۔

تفصیلات کے مطابق ایران جوہری ڈیل میں طے کی گئی یورینیم کی افزودگی کی حد میں بھی اضافہ کرچکا ہے، جبکہ تہران خبردار کرچکا ہے کہ معاہدے کی تمام شقوں پر آہستہ آہستہ عمل درآمد روک دی جائے گی۔

غیر ملکی خبر رساں ادارے کے مطابق اسی تناظر میں ایران کے سپریم لیڈر آیت اللہ خامنہ ای کا کہنا تھا کہ ایران بتدریج ڈیل کی تمام ذمے داریوں سے دست بردار ہوجائے گا۔

انہوں نے معاہدے میں شامل تمام یورپی ممالک کو بھی تنقید کا نشانہ بنایا، خامنہ ای کے مطابق ڈیل میں شامل دیگر ممالک بھی معاہدے پر پورا نہیں اتر رہے۔

ان کا کہنا تھا کہ یورپی ممالک نے گیارہ وعدے دیے تھے اور ان میں سے ایک بھی پورا نہیں کیا گیا، اب ان پارٹنر ممالک نے اپنی کمٹ منٹس یا ذمہ داریوں میں بھی کمی لانا شروع کر دی ہے۔

ایرانی حکام یہ باور کراچکے ہیں کہ اگر یورپی ممالک بھی معاہدے کی پاسداری کریں تو ایران بھی اپنی ذمہ داریاں نبھانے کے لیے تیار کھڑا ہے۔

خیال رہے کہ دو روز قبل یورپی یونین کا جوہری ڈیل سے متعلق خصوصی اجلاس ہوا تھا جس میں ایران کو آفر کی گئی تھی کہ وہ مذاکرات کے ذریعے معاملے کے حل کی طرف آئے، ماضی بھلا کر مستقبل کے بارے میں  سوچنا وقت کا تقاضہ ہے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں