افغان سفیر کی بیٹی اغوا, پاک افغان دفتر خارجہ کے اہم بیانات

افغان وزارت خارجہ کاافغان سفیر کی بیٹی کااسلام آباد سےمبینہ اغواکادعویٰ سامنے آیا ہے جس میں افغان وزارت خارجہ کی افغان سفیر نجیب اللہ کی بیٹی کے اغوا کی شدید مذمت کی گئی ہے، افغان وزارت خارجہ نے اپنے جاری بیان میں کہا کہ افغان سفیرکی صاحبزادی کونامعلوم افرادکی جانب سے اغواکیاگیا، نجیب اللہ کی بیٹی کو تشدد کے بعد چھوڑاگیا

،افغان وزارت خارجہ نے دعویٰ کیا کہ سفیر کی صاحبزادی ابھی تک ہسپتال میں زیر علاج ہے،سفارتی عملےاورانکےاہلخانہ کی سکیورٹی حکومت پاکستان کی ذمہ داری ہے، پاکستان سفارتی عملے اور انکے اہلخانہ کی مکمل سکیورٹی کیلئے ضروری اقدامات کرے،
یہ معاملہ پاکستانی وزارت خارجہ کےساتھ اٹھایاگیاہے،

انہوں نے کہا کہ حکومت پاکستان واقعہ کے ذمہ داروں کو انصاف کے کٹہرے میں لائے

دوسری جانب افغان سفیر کی بیٹی کی مبینہ گمشدگی پر ترجمان دفتر خارجہ کا ردعمل بھی سامنے آگیا, کہا گیا کہ افغان سفارتخانہ نے گزشتہ روز افغان سفیر کی بیٹی کے حوالے سے اطلاع دی ،افغان سفارتخانہ نے اطلاع دی کہ سفیر کی صاحبزادی پر گاڑی چلاتے ہوئے حملہ ہوا ، واقعہ کی اطلاع کے فوری بعد اسلام آباد پولیس نے جامع تحقیقات کا آغاز کیا،

انہوں نے کہا کہ اس حوالے سے وزارت خارجہ اور تمام سکیورٹی ادارے افغان سفیر اور خاندان کے ساتھ رابطہ میں ہیں، افغان سفیر اور ان کے خاندان کی سکیورٹی مزید سخت کردی گئی ہے، قانون نافذ کرنے والے ادارے واقعہ میں ملوث ملزمان کو انصاف کے کٹہرے میں لانے کیلئے سرگرم ہیں، پاکستان میں سفارتی مشن، سفارتکاروں اور ان کے اہلیخانہ کی سکیورتی ترجیح ہے،

ترجمان نے کہا کہ اس قسم کے واقعات کو ہرگز برداشت نہیں کیا جائے گا

اپنا تبصرہ بھیجیں