وزیراعظم کے اسلامی ممالک کو خطوط کے بعد او آئی سی میں فلسطین صورتحال پر قرارداد متفقہ طور پر منظور

وزیراعظم عمران خان کی مکہ میں سیکرٹری جنرل او آئی سی ڈاکٹر یوسف اے سے اہم ملاقات ہوئی جس میں وزیراعظم نے دنیا کے مختلف حصوں میں اسلام فوبیا کے بڑھتے واقعات پر روشنی ڈالی

اس موقع پر وزیراعظم نے اسلامو فوبیا کیخلاف او آئی سی کے پلیٹ فارم سے مشترکہ لائحہ عمل دینے پر زور دیا, کہا کہ مسلم قیادت کو مل کر یقینی بنانا ہوگا کہ دنیا نبی کریم ص سے مسلمان کے محبت کے جذبات کی قدر کرے ، اسلام کو دہشتگردی سے جوڑنے کی اجازت کسی کو نہیں ہونی چاہئیے.

وزیراعظم نے کہا کہ مذہبی انتہا پسندی کے خاتمے اور بین المذاہب ہم آہنگی کیلئے عالمی دنیا کو ملک بیٹھ کر مسائل حل کرنا ہوں گے،

ملاقات میں وزیراعظم کی مسجد اقصی پر اسرائیلی حملے کی شدید الفاظ میں مذمت کرتے ہوئے کہا کہ دنیا فلسطینیوں کی حفاظت کیلئے اپنا کردار ادا کرے اور انہیں حقوق دلائے،

وزیراعظم ہاؤس کی جانب سے جاری کردہ اعلامیہ کے مطابق وزیر اعظم کے مسلم ممالک کے سربراہان مملکت کو لکھے گئے خط کے بعدمتفقہ قرارداد منظور کی گئی تھی، او آئی سی فلسطین کی سنگین صورتحال سے نمٹنے کے لئے اپنا صحیح کردار ادا کرے،

وزیراعظم نے مطالبہ کیا کہ دنیا فلسطینیوں کی حفاظت کیلئے اپنا کردار ادا کرے اور انہیں حقوق دلائے ، کہا کہ عدم رواداری،مذہب یا عقیدے کی بنیاد پر تشدد پر اکسانے کے خلاف عالمی برادری کو مشترکہ حل پر کام کرنا ہو گا

ملاقات میں او آئی سی کے سیکریٹری جنرل نے وزیراعظم کو مسلئہ کشمیر سے متعلق تنظیم کی سرگرمیوں سے آگاہ کیا, اس موقع پر انہوں نے کہا کہ او آئی سی نے مستقل طور پر کشمیر کے مقصد کی حمایت کی ہے، نیامی میں او آئی سی کانفرنس میں مسلئہ کشمیر پر ایک جامع قرارداد منظور کی گئی

اپنا تبصرہ بھیجیں