گاﺅ کدل قتل عام کی برسی پر سرینگر میں ہڑتال

بھارت کے غیر قانونی زیر قبضہ جموں وکشمیر میں گاﺅ کدل قتل عام کی 31ویں برسی پر آج سرینگر کے علاقے گاﺅ کدل اور اسکے ملحقہ علاقوں میں مکمل ہڑتال ہے۔

کشمیرمیڈیا سروس کے مطابق ہڑتال کی کال کل جماعتی حریت کانفرنس نے دی ہے جبکہ دیگرآزادی پسند تنظیموں نے اس کی حمایت کی ہے۔

گاﺅ کدل بسنت باغ ، دالچوک ، ریڈنسی روڑ ، آبی گزر ، مولانا آزاد روڑ،کانی کدل ، چھوٹا بازار ، عید گاہ ، درگاہ ، رینہ وای ، خانیار ، نوہٹہ ، مہاراج گنج ، صفہ کدل ، مائسمہ ، کرال کھنڈ اور شہر کے دیگر علاقوں میں تمام دکانیں اور کاروباری مراکز بند ہیں۔

قابض انتظامیہ نے لوگوں کو بیگناہ شہریوں کے قتل عام کے خلاف احتجاجی مظاہروں سے روکنے کیلئے سرینگر اور دیگر علاقوں میں بڑی تعداد میں بھارتی فوجی اور پولیس اہلکار تعینات کر دیے ہیں۔ گاڑیوں اور لوگوں کی نقل وحرکت روکنے کیلئے سڑکوں پر جگہ جگہ رکاوٹیں کھڑی کی گئی ہیں۔

دریں اثنا لوگوں کی ایک بڑی تعداد سرینگر کے مزار شہداءگئی اورقتل عام کے شہداءکے لیے فاتحہ خوانی کی۔

بھارتی فوجیوں نے 21جنوری 1990کو سرینگر کے علاقے گاﺅکدل میں پر امن مظاہرین پر اندھا دھند فائرنگ کر کے 50سے زائد افراد کو شہید کر دیاتھا۔یہ مظاہرہ بھارتی فوجیوں کی طرف سے گاﺅ کدل میں کئی خواتین کی آبروریزی کے خلاف کیا جا رہا تھا۔

اپنا تبصرہ بھیجیں