سکول کالج 15 ستمبر کو کھلیں گے یا نہیں؟ فیصلہ آج ہوگا

اسلام آباد : صوبائی وزرائے تعلیم کے اجلاس میں آج ملک بھرمیں تعلیمی ادارے پندرہ ستمبر کھولنے سے متعلق فیصلہ ہوگاجبکہ ایس اوپیز پر بھی غور کیا جائے گا۔

تفصیلات کے مطابق وفاقی وزیرتعلیم شفقت محمود کی زیرصدارت بین الصوبائی وزرائےتعلیم کا اجلاس آج ہوگا ، جس میں میں صوبائی وزرائے تعلیم سمیت چیئرمین اور ایگزیکٹو ڈائریکٹر ایچ ای شریک ہوں گے۔

پندرہ ستمبر سےمیٹرک اوراس سے اوپرکی کلاسزکا آغازکرنے کی  جبکہ مڈل کلاسز اکیس اورپرائمری تیس ستمبرسےشروع کرنے کی تجویزہے۔

اجلاس کے چھ نکاتی ایجنڈے کےمطابق تعلیمی اداروں سےمتعلق ایس اوپیزکو حتمی شکل دی جائے گی جبکہ دیگر اہم فیصلے بھی ہوں گے، اور یکساں نصاب تعلیم کا معاملہ بھی زیرغور آئے گا۔

اجلاس میں مختصر اکیڈمک سلیبس اور2021میں امتحانات پر اور وفاقی نظامت تعلیمات میں اینٹی ہراسمنٹ باڈیزکےصوبوں میں قیام  پر بھی گفتگوہوگی جبکہ بی ای سی ایس،این سی ایچ ڈی ٹرانزیشن پلان بھی زیربحث آئےگا۔

وزارت صحت کے حکام کی بریفنگ کے بعد تعلیمی اداروں میں سرگرمیاں بحال کرنے سے متعلق سفارشارت قومی رابطہ کمیٹی کو بھجوائی جائیں گی۔

یاد رہے وزیر تعلیم شفقت محمود نے پریس کانفرنس کرتے ہوئے کہا تھا کہ تعلیمی ادارےکھولنےسےمتعلق حتمی فیصلہ7 ستمبرکوہوگا، کورونا وبا میں کمی آئی ہے، گزشتہ 6ماہ میں بچوں کی تعلیم بہت متاثر ہوئی ہے، تعلیمی سرگرمیاں شروع کرنے سے متعلق تجاویز بھی موجود ہیں۔

شفقت محمود کا کہنا تھا کہ اگلے سال تک وبا کےاثرات کم رہےتوپراناشیڈول ملک میں بحال ہوجائے گا، ہائر، مڈل اور پرائمری سطح پر کلاسز بتدریج شروع کرنے کی تجویز زیر غور ہے۔

معاون خصوصی برائے صحت ڈاکٹر فیصل سلطان نے کہا تھا کوروناوباختم نہیں ہوئی، بداحتیاطی سےدوبارہ بڑھ سکتی ہے، وباسے نمٹنے کیلئے تعلیمی اداروں کی بندش کافیصلہ اہم تھا، 5 کروڑ بچے جب دوبارہ تعلیمی اداروں میں جائیں گے تورسک رہےگا، اداروں کو مرحلہ وار کھولنے سے متعلق بھی تجویز زیر غور ہے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں