شیخ رشید کی ذاتی زندگی اور وہ خود 5، 10 سال بعد کہاں دیکھتےہیں ؟ انہی کی زبانی

شیخ رشید وفاقی وزیرریلوےنے اپنے خیالات کا اظہارغیر ملکی خبر رساں ادارے کو انٹرویو دیتے ہوئے کیا ۔ جب صحافی نے سوال کیا کہ آپ خود کو 5، 10 سال بعد کہاں دیکھتے ہیں تو شیخ رشید نے جواب دیا کہ خود کو مرا ہوا دیکھ رہا ہوں البتہ تین سال بعد خود کو بہتر جگہ پر دیکھ رہا ہوں۔

اپنی ابتدائی زندگی کے حوالے سے ا نہوں نے کہا مجھے سیاست سے محبت تھی،سکول کے دنوں میں سیاست شروع کردی تھی اور قید کاٹ چکا تھا، جب ہتھکڑی بھی میرے ہاتھ میں نہیں آتی تھی تب مجھے چادر سے باندھ کر اعلان تاشقند میں لائے تھے ۔ میں نے تنہا ذوالفقار بھٹو کا جلسہ پلٹ دیا تھا۔

اپنی پیش گوئیوں کے حوالے سے انہوں نے کہا بعض اوقات میرا وجدان یا سوچ یہ کہتی ہے کہ ایسا ہونے لگا ہے۔

میں نے ہمیشہ نمبر ون سے دوستی اور دشمنی کی ، پولیس لیول پر میں کبھی نہیں رہا البتہ فوج سے ہمیشہ تعلقات اچھے رکھتا ہوں۔مجھے اس میں کوئی شرمندگی نہیں ، فوج والے بااثر لوگ ہیں۔

بینظیر بھٹو سے میری کوئی خاص دشمنی نہیں تھی ، مجھے بس ہر وقت ایک دشمن چاہیے ہوتا ہے کیونکہ سیاست کیلئے ایک دشمن ہونا چاہیے ، میں اگر کہوں کہ نوازشریف کو میں نے لیڈر بنایا اور تقریر سکھائی تو لوگ نہیں مانیں گے حالانکہ میرا اس میں بڑا کردار ہے ۔ لیکن نوازشریف نے مجھے 2 دفعہ میئر بننے سے روکا کیونکہ باصلاحیت آدمی کا ہرکوئی راستہ روکتا ہے ۔

میں ٹی وی پر نظر آجائوں تو لوگ چینل تبدیل نہیں کرتے ۔ ایک چینل نے مجھے ایک کروڑ 20 لاکھ ماہانہ دینے کی پیشکش کی تھی لیکن صرف عمران خان کیلئے میں نہیں چاہتا تھا کہ صرف ایک چینل کا ہوکر رہ جائوں۔ذ

اتی زندگی کے حوالے سے انہوں نے بتایاکہ مہینے کے 50 ہزار روپے سگار پر خرچ ہوجاتے ہیں ، وزیر ہوتا ہوں تو سگار تحفے میں آجاتے ہیں ، مشکل اس وقت ہوتی ہے جب جیب سے خریدنے پڑتے ہیں ۔ میں نے کوئی شادی نہیں کی خواہ مخواہ ہی افواہیں پھیلائی گئیں ، البتہ ایک امریکی خاتون کیساتھ جان پہچان تھی لیکن اب تو اسکی شادی ہوگئی ا ور بچے بھی جوان ہیں ۔

اپنا تبصرہ بھیجیں