کرونا وائیرس کا پاکستانی ھیرو ! تحریر- محمد جمیل راھی ایڈووکیٹ


“دوست وہ جو ضرورت میں کام آئے”یہ محاورہ تو آپ نے سن رکھا ہے اس کی بین الاقوامی سطح پر شاندار مثال پاک چین دوستی ہے .دنیا جس کی مثالیں دیتی ہے.1949میں معرض وجود میں آنے والی مملکت چینی  قوم نے بڑے المناک حادثات کا سامنا کیا ہے.1950 کی دھائی میں آنے والے قحط نے 40 ملین انسانوں کو لقمہ اجل بنا لیا تھا. اسے بیسویں صدی کی سب سے بڑی تباہی قرار دیا گیا تھا .چین صج پھر ایک المناک آزمائیش میں مبتلاء ہے.دنیا جس وقت چین کو تنہا کرنے کی سازشیں کر رہی ہے. عالمی میڈیا من گھڑت اور بے بنیاد خبریں پھیلا کر اس کی پریشانی میں اضافہ کر رہا ہا ہے پاکستان مشکل کی اس گھڑی میں چینی قوم کے ساتھ کھڑا نظرآتا ہے. پاکستانی قوم کے ایک بیٹے ڈاکٹر عثمان جنجوعہ نے آزمائیش کی اس کٹھن گھڑی میں اپنے چینی بھائیوں کی ناقابل فراموش خدمات کی بدولت قوم کا فرض کفایا ادا کر دیا ہے جہلم دینہ سے تعلق رکھنے والے اس نوجوان ڈاکٹر نے پوری قوم کا سرفخر سے بلند کر دیا ہے. عالمی نشریاتی ادارے  بی بی سی میں چھپنے والی رپورٹ کے مطابق ڈاکٹر عثمان جنجوعہ کرونا وائیرس کے خلاف جنگ میں شامل ہو کر پہلے پاکستانی بین الاقوامی رضا کار ڈاکٹر کارکن بن چکے ہیں.ان کا کہنا ہے کہ,”ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﮐﻮﺋﯽ ﺑﮍﺍ ﮐﺎﻡ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﯿﺎ ﮨﮯ۔ ﺑﺤﺜﯿﺖ ﮈﺍﮐﭩﺮ ﯾﮧ ﻣﺠﮫ ﭘﺮ فرضﺗﮭﺎ ﮐﮧ ﻣﯿﮟ ﺍﭘﻨﮯ ﺣﻠﻒ ﮐﯽ ﭘﺎﺳﺪﺍﺭﯼ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﺟﻮ ﮐﭽﮫ ﮐﺮﺳﮑﺘﺎ ﮨﻮﮞ ﻭﮦ ﮐﺮتا۔ ﺍﺱ ﻣﻮﻗﻊ ﺍﯾﮏ ﻗﺪﻡ بھی  ﭘﯿﭽﮭﮯ ﮨﭩﻨﺎ  ﺑﺰﺩﻟﯽ ﮨﻮﺗﯽ ﺍﻭﺭ ﻣﯿﺮﺍ ﺿﻤﯿﺮ اس پر ملامت کرتا “.ان کا کہنا تھا کہ وہ ﭼﯿﻦ ﮐﮯ ﺻﻮﺑﮧ ﮨﻨﺎﻥ ﮐﮯ ﺩﺍﺭﺍﻟﺤﮑﻮﻣﺖ ﭼﺎﻧﮕﺸﺎ ﮐﯽ ﭼﺎﻧﮕﺸﺎ ﻣﯿﮉﯾﮑﻞ ﯾﻮﻧﯿﻮﺭﺳﭩﯽ ﻣﯿﮟ ﺳﺎﻝ 2016 ﺳﮯ ﺑﺤﺜﯿﺖ ﺍﺳﺘﺎﺩ ﺧﺪﻣﺎﺕ ﺍﻧﺠﺎﻡ ﺩﮮ ﺭﮨﮯ ﮨﯿﮟ۔ﮐﻮﺭﻭﻧﺎ ﻭﺍﺋﺮﺱ ﮐﯽ ﻭﺑﺎ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ انہوں ﻧﮯ ﺭﺿﺎﮐﺎﺭﺍﻧﮧ ﻃﻮﺭ ﭘﺮ ﺍﭘﻨﯽ ﺧﺪﻣﺎﺕ ﭘﯿﺶ ﮐﯿﮟ۔ ﺟﺲ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﻭﮦ ﭼﯿﻦ ﻣﯿﮟ اسﻭﺍﺋﺮﺱ ﮐﮯ ﺧﻼﻑ ﻟﮍﻧﮯ ﻭﺍﻟﮯ ﭘﮩﻠﮯ ﺑﯿﻦ ﺍﻻﻗﻮﺍﻣﯽ ﮈﺍﮐﭩﺮ قرار پائے. ﭼﯿنی ﻣﯿﮉﯾﺎ ﺍﻥ ﮐﻮ ﮨﯿﺮﻭ ﮐﺎ ﺩﺭﺟﮧ ﺩﮮ ﺭﮨﺎ ﮨﮯ۔موذی وائیرس کی وجہ سے غیرملکیﺷﮩﺮﯼ ﭼﯿﻦ ﮐﮯ ﺳﻔﺮ ﺳﮯ ﮔﺮﯾﺰاں ہیں دنیا بھر کی آمد ورفت رک چکی ہے. امریکہ سمیت دیگر ممالک چین کے سفر پر پابندیاں لگا رہے ہیں.متعدد ممالک اس وائیرس کی لپیٹ میں آنے سے عالمی سطح پر تشویش پائی جاتی ہے.یو این او اس وباء کی وجہ سے “گلوبل ایمرجنسی”نافذ کر چکی ہے.چیں سے دنیا بھاگ رہی ہے.ملٹی نیشن کمپنیاں اپنے دفاتر متاثرہ شہر سے بند کر کے جا چکے ہیں.ملک بھر میں خوف و ھراس اور خوفناک وائیرس جو لا علاج ہے تیزی سے پھیل رہا ہے.کسی بندے کا جان ہتھیلی پر رکھ کر کام کرنا یقینی طور پر قابل ستائیش ہے.یادﺭﮨﮯ ﮐﮧ ﭼﯿﻦ ﮐﺎ ﺻﻮﺑﮧ ﻭﻭﮨﺎﻥ ﺍﺱ ﻭﻗﺖ اس ﻭﺍﺋﺮﺱ ﺳﮯ ﺳﺐ ﺳﮯ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﻣﺘﺎﺛﺮ ﮨﮯ۔ جس کے لئے ﭼﯿﻦ ﮐﮯ ﻣﻘﺎﻣﯽ ﻃﺒﯽ ﻋﻤﻠﮯ ﮐﻮ طلب کیا گیا. ﺭﺿﺎﮐﺎﺭﺍﻧﮧ ﻃﻮﺭ ﭘﺮ ﻃﻠب کئے جانے کےاس عمل  ﮐو” ﺧﻮﺩ ﮐﺶ ﻣﺸﻦ” ﮐﺎ ﻧﺎﻡ ﺩﯾﺎ ﮔﯿﺎ ۔ ﭼﯿﻦ ﻣﯿﮟ ﭘﻮﺭﮮ ﻣﻠﮏ ﺳﮯ ﺳﯿﻨﮑﭩﺮﻭﮞ ﮐﯽ ﺗﻌﺪﺍﺩ ﻣﯿﮟ طبی ﻋﻤﻠﮯ ﮐﮯ ﻣﺎﮨﺮﯾﻦ ﻧﮯ ﺍﭘﻨﯽ ﺧﺪﻣﺎﺕ ﭘﯿﺶ ﮐیں. پاکستانی واحد ﮈﺍﮐﭩﺮ ﻋﺜﻤﺎﻥ ﺟﻨﺠﻮﻋﮧ ﻧﮯ ﺑﯽ ﺑﯽ ﺳﯽ ﺳﮯ ﺑﺎﺕ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﺑﺘﺎﯾﺎ ﮐﮧ ﻭﮦ ﻣﮩﻢ ﻣﯿﮟ ﺷﺮﯾﮏ ﮨﻮ ﭼﮑﮯ ﮨﯿﮟ۔ “ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﮐﻮﺋﯽ ﺑﮍﺍ ﮐﺎﻡ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﯿﺎ ﮨﮯ۔ ﺑﺤﺜﯿﺖ ﮈﺍﮐﭩﺮ ﯾﮧ ﻣﺠﮫ ﭘﺮ ﻻﺯﻡ ﺗﮭﺎ ﮐﮧ ﻣﯿﮟ ﺍﭘﻨﮯ ﺣﻠﻒ ﮐﯽ ﭘﺎﺳﺪﺍﺭﯼ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﺟﻮ ﮐﭽﮫ ﮐﺮﺳﮑﺘﺎ ﮨﻮﮞ ﻭﮦ ﮐﺮﻭﮞ. ﺍﺱ ﻣﻮﻗﻊ ﺍﯾﮏ ﻗﺪﻡ ﭘﯿﭽﮭﮯ ﮨﭩﻨﺎ ﺑﮭﯽ ﺑﺰﺩﻟﯽ ﮨﻮﺗﯽ ﺍﻭﺭ ﻣﯿﺮﺍ ﺿﻤﯿﺮ ﯾﮧ ﺑﺮﺩﺍﺷﺖ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﺮ ﺳﮑﺘﺎ”۔ﮈﺍﮐﭩﺮ ﺟﻨﺠﻮﻋﮧ ﭼﯿﻦ ﮐﮯ ﺻﻮﺑﮧ ﮨﻨﺎﻥ ﮐﮯ ﺩﺍﺭﺍﻟﺤﮑﻮﻣﺖ ﭼﺎﻧﮕﺸﺎ ﮐﯽ ﭼﺎﻧﮕﺸﺎ ﻣﯿﮉﯾﮑﻞ ﯾﻮﻧﯿﻮﺭﺳﭩﯽ ﻣﯿﮟ ﺳﺎﻝ 2016 ﺳﮯ ﺑﺤﺜﯿﺖ ﺍﺳﺘﺎﺩ ﺧﺪﻣﺎﺕ ﺍﻧﺠﺎﻡ ﺩﮮ ﺭﮨﮯ ﮨﯿﮟ۔موذی ﻭﺍﺋﺮﺱ ﮐﯽ ﻭﺑﺎ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﮈﺍﮐﭩﺮ ﺟﻨﺠﻮﻋﮧ ﻧﮯ ﺭﺿﺎﮐﺎﺭﺍﻧﮧ ﻃﻮﺭ ﭘﺮ ﺍﭘﻨﯽ ﺧﺪﻣﺎﺕ ﭘﯿﺶ ﮐﯿﮟ۔ ﺟﺲ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﻭﮦ ﭼﯿﻦ ﻣﯿﮟ ﮐﻮﺭﻭﻧﺎ ﻭﺍﺋﺮﺱ ﮐﮯ ﺧﻼﻑ ﻟﮍﻧﮯ ﻭﺍﻟﮯ ﭘﮩﻠﮯ ﺑﯿﻦ ﺍﻻﻗﻮﺍﻣﯽ رضا کار ﮈﺍﮐﭩﺮ ﺑﻦ ﭼﮑﮯ ﮨﯿﮟ ﺟﺒﮑﮧ ﭼﯿﻦ ﮐﺎ ﻣﯿﮉﯾﺎ ﺍﻥ ﮐﻮ ﮨﯿﺮﻭ ﮐﺎ ﺩﺭﺟﮧ ﺩﮮ ﺭﮨﺎ ﮨﮯ. ﻭﺍﺿﺢ ﺭﮨﮯ ﮐﮧ ﭼﯿﻦ ﮐﺎ ﺻﻮﺑﮧ ﻭﻭﮨﺎﻥ ﺍﺱ ﻭﻗﺖ اس ﻭﺍﺋﺮﺱ ﺳﮯ ﺳﺐ ﺳﮯ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﻣﺘﺎﺛﺮ ﮨوا ہے.علاج کی خاطرﻋﻤﻠﮯﮐوﺭﺿﺎﮐﺎﺭﺍﻧﮧﻃﻮﺭ ﭘﺮ ﻃﻠﺐ ﮐﯿﺎ ﮔﯿﺎ . ﺟﺲ ﮐﻮ ﻃﺒﯽ ﻋﻤﻠﮯ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ” ﺧﻮﺩ ﮐﺶ ﻣﺸﻦ” ﮐﺎ ﻧﺎﻡ ﺩﯾﺎ ﮔﯿﺎ ۔ ﭼﯿﻦ ﻣﯿﮟ ﻣﻠﮏ بھرﺳﮯ ﺳﯿﻨﮑﭩﺮﻭﮞ ﮐﯽ ﺗﻌﺪﺍﺩ ﻣﯿﮟ ﻃﺒﯽ ﻋﻤﻠﮯ ﮐﮯ ﻣﺎﮨﺮﯾﻦ ﻧﮯ ﺍﭘﻨﯽ ﺧﺪﻣﺎﺕ ﭘﯿﺶ ﮐﯽ ﮨﯿﮟ۔ﮈﺍﮐﭩﺮ ﻋﺜﻤﺎﻥ ﺟﻨﺠﻮﻋﮧ ﻧﮯ ﺑﯽ ﺑﯽ ﺳﯽ ﺳﮯ ﺑﺎﺕ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﺑﺘﺎﯾﺎ ﮐﮧ ﻭﮦ ﻣﮩﻢ ﻣﯿﮟ ﺷﺮﯾﮏ ﮨﻮ ﭼﮑﮯ ﮨﯿﮟ۔ ۔ﮈﺍﮐﭩﺮ ﻋﺜﻤﺎﻥ  ﮐﺎ ﮐﮩﻨﺎ ﺗﮭﺎ ﮐﮧ ﺍﺱ ﻭﻗﺖ ﭼﯿﻦ ﮐﯽ ﺣﮑﻮﻣﺖ، ﻃﺒﯽ ﻋﻤﻠﮧ ﺍﻭﺭ ﻋﻮﺍﻡ ﺳﺐ ﯾﮏ ﺟﺎﻥ ﮨﻮ ﮐﺮ ﮐﻮﺭﻭﻧﺎ ﻭﺍﺋﺮﺱ ﮐﮯ ﺧﻼﻑ ﻟﮍ ﺭﮨﮯ ﮨﯿﮟ۔ ﻋﻮﺍﻡ ﺍﻭﺭ ﺳﺐ ﮐﮯ ﺣﻮﺻﻠﮯ ﺑﻠﻨﺪ ﮨیں۔ ﺍﺱ ﺟﻨﮓ ﻣﯿﮟ ﺷﮑﺴﺖ ﮐﻮﺋﯽ ﺑﮭﯽ ﺁﭘﺸﻦ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﮯ ﺑﻠﮑﮧ ﺳﺐ ﻣﻞ کر اس  ﻭﺍﺋﺮﺱ ﮐﻮ ﺟﻠﺪ ﮨﯽ ﺷﮑﺴﺖ ﺩﯾﮟ ﮔﮯ۔ﺍﺱ ﻣﯿﮟ ﮐﻮﺋﯽ ﺷﮏ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﮧ ﻭﺍﺋﺮﺱ ﮐﮯ ﺁﻏﺎﺯ ﮐﮯ ﺩﻧﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﻃﺒﯽ ﻋﻤﻠﮯ ﮐﮯ ﻟﻮﮒ ﺑﮭﯽ ﻣﺮﯾﻀﻮﮞ ﮐﮯ ﻋﻼﺝ ﻣﻌﺎﻟﺠﮯ ﮐﮯ ﺩﻭﺭﺍﻥ ﻣﺘﺎﺛﺮ ﮨﻮﺋﮯ لیکنﺍﺏ ﺍﺱ ﻭﻗﺖ صورت حال بدل چکی ہے۔ ﻃﺒﯽ ﻋﻤﻠﮯ ﮐﻮ ﺑﺘﺎ ﺩﯾﺎ ﮔﯿﺎ ﮨﮯ ﮐﮧ ﻭﮦ ﮐﯿﺴﮯ ﺣﻔﺎﻇﺘﯽ ﺍﻗﺪﺍﻣﺎﺕ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﻣﺮﯾﻀﻮﮞ ﮐﻮ ﻋﻼﺝ ﻣﻌﺎﻟﺠﮯ ﮐﯽ ﺳﮩﻮﻟﺘﯿﮟ ﻓﺮﺍﮨﻢ ﮐﺮﯾﮟ۔ ﺍﺏ ﻃﺒﯽ ﻋﻤﻠﮯ ﮐﮯ ﻣﺘﺎﺛﺮ ﮨﻮﻧﮯ ﮐﯽ ﺷﺮﺡ ﺑﮩﺖ ﮐﻢ ﮨﻮ ﭼﮑﯽ ﮨﮯ ﺟﺒﮑﮧ ﻣﺮﯾﺾ ﺑﮭﯽ ﺑﮩﺘﺮ ﮨﻮ ﺭﮨﮯ ﮨﯿﮟ۔ﺍنہوں نے بتایا ﮐﮧﭼﯿﻦﮐﯽﺣﮑﻮﻣﺖ ﺍﭘﻨﯽ ﭘﻮﺭﯼ ﻗﻮﺕ، ﻃﺎﻗﺖ، ﻭﺳﺎﺋﻞ ﺳﺐ ﮐﭽﮫ ﮐﻮﺭﻭﻧﺎ ﻭﺍﺋﺮﺱ ﮐﻮ ﺷﮑﺴﺖ ﺩﯾﻨﮯ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺑﺮﻭﺋﮯ ﮐﺎﺭ ﻻﺭﮨﯽ ﮨﮯ۔ ﭼﯿﻦ ﺟﻠﺪ ﮨﯽ ﭘﻮﺭﯼ ﺩﻧﯿﺎ ﺳﮯ ﺍﺱ ﮐﻮ ﻣﺤﻔﻮﻅ ﮐﺮ ﺩﮮ ﮔﺎ۔ﮈﺍﮐٹر نے مزید بتایا ﮐﮧ چونکہ ﺍﻧﮭﻮﮞ ﻧﮯ ﭼﯿﻦ ﺳﮯ ﻃﺐ ﮐﯽ ﺗﻌﻠﯿﻢ ﺣﺎﺻﻞ ﮐﯽ ہےاس لئیے ﻣﯿﺮﺍ ﭼﯿﻦ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﺑﮩﺖ ﮔﮩﺮﺍ ﺗﻌﻠﻖ ﮨﮯ۔ ﯾﮧ ﻣﯿﺮا ﺩﻭﺳﺮﺍ ﮔﮭﺮ ﺍﻭﺭ ﻭﻃﻦ ﮨﮯ۔ ﻣﯿﮟ ﮐﺴﯽ ﺑﮭﯽ ﻣﺸﮑﻞ ﻣﯿﮟ ﭼﯿﻦ ﺍﻭﺭ اسﮐﮯ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﮐﻮ ﺗﻨﮩﺎ ﻧﮩﯿﮟ ﭼﮭﻮﮌ ﺳﮑﺘﺎ۔ ﺍﮔﺮ  ﺯﯾﺎﺩﮦ ﻧﮩﯿﮟ توﺟﻮ ﺗﮭﻮﮌﺍ ﺑﮩﺖ ﮐﺮﺳﮑﺘﺎ ﮨﻮﮞ ﻭﮦ ﮐﺮﻭﮞ ﮔﺎ ﺍﻭﺭﮐﺮﺭﮨﺎﮨﻮﮞ.ﺍﻧﭩﺮﻣﯿﮉﯾﭧ ﮐﯽ ﺗﻌﻠﯿﻢ ﺍﻧﮭﻮﮞ ﻧﮯ ﺟﮩﻠﻢ ﮐﮯ ﻣﻘﺎﻣﯽ ﮐﺎﻟﺞ ﺳﮯ ﺣﺎﺻﻞ ﮐﯽ ﺗﮭﯽ۔ ﺟﺲ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﺳﺎﻝ 2007 ﻣﯿﮟ ﻣﯿﮉﯾﮑﻞ ﮐﯽ ﺗﻌﻠﯿﻢ ﺣﺎﺻﻞ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﭼﯿﻦ ﮐﯽ ﭼﺎﻧﮕﺸﺎ ﻣﯿﮉﯾﮑﻞ ﯾﻮﻧﯿﻮﺭﺳﭩﯽ ﻣﯿﮟ ﭼﻠﮯ ﮔﮯ ﺗﮭﮯ۔ ﺟﮩﺎﮞ ﺳﮯ ﻣﯿﮉﯾﮑﻞ ﮐﯽ ﮈﮔﺮﯼ ﮐﮯ ﮨﻤﺮﺍﮦ ﺳﺎﻝ 2012 ﻣﯿﮟ ﻭﺍﭘﺴﯽ ﮨﻮﺋﯽ۔ﺟﺲ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﺍﯾﮏ ﺳﺎﻝ ﺗﮏ ﻣﯿﻮ ﮨﺴﭙﺘﺎﻝ ﻻﮨﻮﺭ ﻣﯿﮟ ﺧﺪﻣﺎﺕ ﺍﻧﺠﺎﻡ ﺩﯾﺘﮯ ﺭﮨﮯ۔ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﺍﻋﻠﯽٰ ﺗﻌﻠﯿﻢ ﮐﮯ ﻟﯿﮯﻭﺍﭘﺲﭼﺎﻧﮕﺸﺎ ﻣﯿﮉﯾﮑﻞ ﯾﻮﻧﯿﻮﺭﺳﭩﯽ ﭼﻠﮯ ﮔﮯ۔ﺍﻋﻠﯽٰ ﺗﻌﻠﯿﻢ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ہی ﭼﺎﻧﮕﺸﺎ ﮨﯽ ﻣﯿﮟ ﻭﮦ ﮨﺴﭙﺘﺎﻝ ﺳﮯ ﺑﮭﯽ ﻣﻨﺴﻠﮏ ﮨﻮ ﮔﺌﮯ ﺍﻭﺭ ﺳﺎﻝ 2016/17 ﻣﯿﮟ ﺍﻧﮭﻮﮞ ﻧﮯ ﭼﺎﻧﮕﺸﺎ ﻣﯿﮉﯾﮑﻞ ﯾﻮﻧﯿﻮﺭﺳﭩﯽ ﻣﯿﮟ ﺑﺤﺜﯿﺖ ﭘﺮﻭﻓﯿﺴﺮ ﮈﺍﮐﭩﺮ ﮐﮯ ﮐﺎﻡ ﺷﺮﻭﻉ ﮐﺮ ﺩﯾﺎ۔ ﺟﺲ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﺍﺏ ﺗﮏ ﻭﮨﺎﮞ ﮨﯽ ﺧﺪﻣﺎﺕ ﺍﻧﺠﺎﻡ ﺩﮮ ﺭﮨﮯ ﮨﯿﮟ۔30 ﺳﺎﻟﮧ ﮈﺍﮐﭩﺮ ﻋﺜﻤﺎﻥ ﺟﻨﺠﻮﻋﮧ ﻏﯿﺮ ﺷﺎﺩﯼ ﮨﯿﮟ۔ ﺍﻥ ﮐﮯ ﻭﺍﻟﺪ ﺍﻭﺭﻧﮓ ﺯﯾﺐ ﮔﺰﺷﺘﮧ 38 ﺳﺎﻝ ﺳﮯ ﺩﯾﻨﮧ ﺟﮩﻠﻢ ﮨﯽ ﻣﯿﮟ ﺑﺤﺜﯿﺖ ﺍﺳﺘﺎﺩ ﺧﺪﻣﺎﺕ ﺍﻧﺠﺎﻡ ﺩﮮ ﺭﮨﮯ ﮨﯿﮟ۔ ﯾﮧ ﺩﻭ ﺑﮭﺎﺋﯽ ﺍﻭﺭ ﺍﯾﮏ ﺑﮩﻦ ﮨﮯ۔ ﮈﺍﮐﭩﺮ ﻋﺜﻤﺎﻥ ﺟﻨﺠﻮﻋﮧ ﺍﭘﻨﮯ ﺧﺎﻧﺪﺍﻥ ﻣﯿﮟ ﭘﮩﻠﮯ ﮈﺍﮐﭩﺮ ﮨﯿﮟ ﺟﺒﮑﮧ ﺍﻥ ﮐﮯ ﺍﯾﮏ ﭼﮭﻮﭨﮯ ﺑﮭﺎﺋﯽ ﺟﺮﻣﻨﯽ ﻣﯿﮟ ﺍﻧﺠﯿﻨﯿﺮﻧﮓ ﮐﯽ ﺗﻌﻠﯿﻢ ﺣﺎﺻﻞ ﮐﺮ ﺭﮨﮯ ﮨﯿﮟ۔ ﺟﺒﮑﮧ ﭼﮭﻮﭨﯽ ﺑﮩﻦ ﯾﻮﻧﯿﻮﺭﺳﭩﯽ ﻣﯿﮟ ﺯﯾﺮ ﺗﻌﻠﯿﻢ ﮨﯿﮟ۔ﺩﯾﻨﮧ ﻣﯿﮟ ﺍﻥ ﮐﮯ ﻭﺍﻟﺪ ﺍﻭﺭﻧﮓ ﺯﯾﺐ ﮐﻮ”ﺑﺎﺑﺎئےﺳﮑﻮﻝ” ﮐﮯ ﻧﺎﻡ ﺳﮯ ﯾﺎﺩ ﮐﯿﺎ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ۔ ﭼﯿﻦ ﻣﯿﮟ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﮐﮯ ﺳﻔﺎﺭﺗﺨﺎﻧﮯ ﻧﮯ ﺑﮭﯽ ﺍﭘﻨﮯ ﺍﯾﮏ ﭨﻮﯾﭧ ﻣﯿﮟ ﮈﺍﮐﭩﺮ ﻋﺜﻤﺎﻥ ﺟﻨﺠﻮﻋﮧ ﮐﻮ ﺷﺎﻧﺪﺍﺭ ﺍﻟﻔﺎﻅ ﻣﯿﮟ ﺧﺮﺍﺝِ ﺗﺤﺴﯿﻦ ﭘﯿﺶ ﮐﯿﺎ ﮨﮯ۔ ﺟﺲ ﻣﯿﮟ ﮐﮩﺎ ﮔﯿﺎ ﮨﮯ ﮐﮧ ’ ﮨﻢ ﮈﺍﮐﭩﺮ ﻋﺜﻤﺎﻥ ﺟﻨﺠﻮﻋﮧ ﮐﮯ
ﺟﺬﺑﮯ.ﮐﯽ ﺗﻌﺮﯾﻒ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﯿﮟ۔ ‘ﭼﯿﻦ ﮐﮯ ﻣﻘﺎﻣﯽ ﻣﯿﮉﯾﺎ ﻣﯿﮟ ﮈﺍﮐﭩﺮ ﻋﺜﻤﺎﻥ ﺟﻨﺠﻮﻋﮧ ﮐﻮ ﮨﯿﺮﻭ ﻗﺮﺍﺭ ﺩﯾﺎ ﺟﺎ ﺭﮨﺎ ﮨﮯ۔ ﭼﯿﻦ ﮐﮯ ﻣﺨﺘﻠﻒ ﭨﯿﻠﯽ ﻭﮊﻥ ﭼﯿﻨﻠﻮﮞ، ﺍﺧﺒﺎﺭﺍﺕ ﺍﻭﺭ ﺳﻮﺷﻞ ﻣﯿﮉﯾﺎ ﭘﺮ ﺍﻥ ﺳﮯ ﻣﺘﻌﻠﻖ ﺧﺒﺮﯾﮟ ﺍﻭﺭ ﻣﺨﺘﻠﻒ ﭘﺮﻭﮔﺮﺍﻡ ﭼﻼﺋﮯ ﮔﮯ ﮨﯿﮟ۔
ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﻣﯿﮟ ﺑﮭﯽ ﺳﻮﺷﻞ ﻣﯿﮉﯾﺎ ﭘﺮ ﮐﺌﯽ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﻧﮯ ﮈﺍﮐﭩﺮ ﻋﺜﻤﺎﻥ ﺟﻨﺠﻮﻋﮧ ﮐﻮ ﮨﯿﺮﻭ ﻗﺮﺍﺭ ﺩﯾﻨﮯ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﺍﻥ ﮐﯽ ﺧﯿﺮﯾﺖ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺩﻋﺎ ﮐﯽ ﮨﮯ۔ﮈﺍﮐﭩﺮ ﻋﺜﻤﺎﻥ ﮐﺎ ﮐﮩﻨﺎ ﺗﮭﺎ ﮐﮧ ﺍﻧﮭﻮﮞ ﻧﮯ ﭼﯿﻦ ﺳﮯ ﻃﺐ ﮐﯽ ﺗﻌﻠﯿﻢ ﺣﺎﺻﻞ ﮐﯽ.یہ میرا دوسرا گھر ہے.ﮈﺍﮐﭩﺮ ﻋﺜﻤﺎﻥ  نےﺍﻧﭩﺮﻣﯿﮉﯾﭧ ﮐﯽ ﺗﻌﻠﯿﻢ ﺟﮩﻠﻢ ﮐﮯ ﻣﻘﺎﻣﯽ ﮐﺎﻟﺞ ہی سے ﺣﺎﺻﻞ ﮐﯽ.2007 ﻣﯿﮟﻣﯿﮉﯾﮑﻞﮐﯽﺗﻌﻠﯿﻢﺣﺎﺻﻞﮐﺮﻧﮯﮐﮯﻟﯿﮯﭼﯿﻦﮐﯽﭼﺎﻧﮕﺸﺎﻣﯿﮉﯾﮑﻞﯾﻮﻧﯿﻮﺭﺳﭩﯽ ﭼﻠﮯ ﮔﮯ ﺗﮭﮯ۔ ﺟﮩﺎﮞ ﺳﮯ ﻣﯿﮉﯾﮑﻞ ﮐﯽ ﮈﮔﺮﯼ ﮐﮯ ﮨﻤﺮﺍﮦ ﺳﺎﻝ 2012 ﻣﯿﮟ ﻭﺍﭘﺴﯽ ﮨﻮﺋﯽ۔ ﺍﯾﮏﺳﺎﻝتکﻣﯿﻮﮨﺴﭙﺘﺎﻝ ﻻﮨﻮﺭ ﻣﯿﮟ ﺧﺪﻣﺎﺕ ﺍﻧﺠﺎﻡ ﺩیں۔ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﺍﻋﻠﯽٰ ﺗﻌﻠﯿﻢ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﻭﺍﭘﺲ ﭼﺎﻧﮕﺸﺎ ﻣﯿﮉﯾﮑﻞ ﯾﻮﻧﯿﻮﺭﺳﭩﯽ کا رخ کیا.ﺍﻋﻠﯽٰ ﺗﻌﻠﯿﻢ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﺳﺎﺗﮫ ﭼﺎﻧﮕﺸﺎ ﮨﯽ ﻣﯿﮟ ﻭﮦ ﮨﺴﭙﺘﺎﻝ ﺳﮯ ﺑﮭﯽ ﻣﻨﺴﻠﮏ ﮨﻮ ﮔﺌﮯ ﺍﻭﺭ ﺳﺎﻝ 2016/17 ﻣﯿﮟ ﺍﻧﮭﻮﮞﻧﮯاسی  ﯾﻮﻧﯿﻮﺭﺳﭩﯽ ﻣﯿﮟ ﺑﺤﺜﯿﺖ ﭘﺮﻭﻓﯿﺴﺮ ﮈﺍﮐﭩﺮ ﮐﮯ ﮐﺎﻡ ﺷﺮﻭﻉ ﮐﺮ ﺩﯾﺎ۔ ﺟﺲ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﺍﺏ ﺗﮏ ﻭﮨﺎﮞ ﮨﯽ ﺧﺪﻣﺎﺕ ﺍﻧﺠﺎﻡ ﺩﮮ ﺭﮨﮯ ﮨﯿﮟ۔ﺗﻘﺮﯾﺒﺎً 30 ﺳﺎﻟﮧ ﮈﺍﮐﭩﺮ ﻋﺜﻤﺎﻥ ﺟﻨﺠﻮﻋﮧ ﻏﯿﺮ ﺷﺎﺩﯼ ﮨﯿﮟ۔ ﺍﻥ ﮐﮯ ﻭﺍﻟﺪ ﺍﻭﺭﻧﮓ ﺯﯾﺐ ﮔﺰﺷﺘﮧ 38 ﺳﺎﻝ ﺳﮯ ﺩﯾﻨﮧ ﺟﮩﻠﻢ ﮨﯽ ﻣﯿﮟ ﺑﺤﺜﯿﺖ ﺍﺳﺘﺎﺩ ﺧﺪﻣﺎﺕ ﺍﻧﺠﺎﻡ ﺩﮮ ﺭﮨﮯ ﮨﯿﮟ۔ﺩﯾﻨﮧ ﻣﯿﮟ ﺍﻥ ﮐﮯ ﻭﺍﻟﺪ ﮐﻮ “ﺑﺎﺑﺎئے ﺳﮑﻮﻝ” ﮐﮯ ﻧﺎﻡ ﺳﮯ ﯾﺎﺩ ﮐﯿﺎ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ۔ ﭘﻮﺭﮮ ﻋﻼﻗﮯ ﻣﯿﮟ ﻣﺸﮩﻮﺭﻭﻣﻌﺮﻭف ہیں.ﮈﺍﮐﭩﺮ ﻋﺜﻤﺎﻥ ﺟﻨﺠﻮﻋﮧ ﮐﮯ ﻭﺍﻟﺪ ﺍﻭﺭﻧﮕﺰﯾﺐ ﻧﮯ ﺑﯽ ﺑﯽ سی کو بتایاﮐﮧ ﺟﺐ ﻭﮦ ﮈﺍﮐﭩﺮﯼ ﮐﯽ ﺗﻌﻠﯿﻢ ﺣﺎﺻﻞ ﮐﺮﺭﮨﺎ ﺗﮭﺎ ﺗﻮ ﮨﻢ ﻧﮯ ﺍﺱ ﺳﮯ ﯾﮧ ﺿﺮﻭﺭ ﮐﮩﺎ ﺗﮭﺎ ﮐﮧ ﺍﯾﺴﺎ ﮈﺍﮐﭩﺮ ﺑﻨﻨﺎ ﮐﮧ ﮨﻤﺎﺭﺍ ﻧﺎﻡ ﺭﻭﺷﻦ ﮨﻮ ﺍﻭﺭ ﻟﻮﮒ ﺍﮔﺮ ﮨﻤﯿﮟ ﺍﭼﮭﺎ ﻧﮧ ﮐﮩﯿﮟ ﺗﻮ ﺑﺮﺍ ﺑﮭﯽ ﻧﮧ ﮐﮩﯿﮟ۔ ﯾﮧ ﺩﻭ ﺑﮭﺎﺋﯽﺍﻭﺭﺍﯾﮏﺑﮩﻦﮨﮯﮈﺍﮐﭩﺮﻋﺜﻤﺎﻥ ﺟﻨﺠﻮﻋﮧ ﺍﭘﻨﮯ ﺧﺎﻧﺪﺍﻥ ﻣﯿﮟ ﭘﮩﻠﮯ ﮈﺍﮐﭩﺮ ﮨﯿﮟﺟﺒﮑﮧ ﺍﻥ ﮐﮯ ﺍﯾﮏ ﭼﮭﻮﭨﮯ ﺑﮭﺎﺋﯽ ﺟﺮﻣﻨﯽ ﻣﯿﮟ ﺍﻧﺠﯿﻨﯿﺮﻧﮓ ﮐﯽ ﺗﻌﻠﯿﻢ ﺣﺎﺻﻞ ﮐﺮ ﺭﮨﮯ ﮨﯿﮟ۔ ﺟﺒﮑﮧ ﭼﮭﻮﭨﯽ ﺑﮩﻦ ﯾﻮﻧﯿﻮﺭﺳﭩﯽ ﻣﯿﮟ ﺯﯾﺮ ﺗﻌﻠﯿﻢ ﮨﯿﮟ۔۔ﮈﺍﮐﭩﺮ ﻋﺜﻤﺎﻥ ﭼﯿﻦ ﺍﻭﺭ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﻣﯿﮟ ﮨﯿﺮﻭ.ﺍﻭﺭ والد ﮐﺎ ﮐﮩﻨﺎ ﺗﮭﺎ ﮐﮧ ﺟﺐ ﺳﮯ ﻣﯿﮉﯾﺎ ﭘﺮ ﻋﺜﻤﺎﻥ ﺳﮯ ﻣﺘﻌﻠﻖ ﺧﺒﺮﯾﮟ ﺁﺋﯿﮟ ﮨﯿﮟ ﺍﺱ ﻭﻗﺖ ﺳﮯ ﻟﻮﮔﻮﻥ ﮐﺎ ﺗﺎﻧﺘﺎ ﺑﻨﺪﮬﺎ ﮨﻮﺍ ﮨﮯ۔ ﺍﯾﮏ ﺗﻮ ﻣﺠﮭﮯ ﭘﻮﺭﺍ ﺩﯾﻨﮧ ﺟﺎﻧﺘﺎ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﭘﻮﺭﯼ ﺩﻧﯿﺎ ﻣﯿﮟ ﻣﯿﺮﮮ ﺷﺎﮔﺮﺩ ﻣﻮﺟﻮﺩ ﮨﯿﮟ۔ ﺻﺒﺢ ﺳﮯ ﻣﯿﺮﺍ ﻓﻮﻥ ﺑﻨﺪ ﮨﻮﺭﮨﺎ ﮨﮯ۔ ﮔﮭﺮ ﻣﯿﮟ ﮨﺮ ﻭﻗﺖ ﻟﻮﮒ ﻣﻮﺟﻮﺩ ﮨﯿﮟ۔ ﻟﻮﮒ ﺟﺲ ﻣﺤﺒﺖ ﺍﻭﺭ ﭘﮭﺮ ﻋﻘﯿﺪﺕ ﮐﺎ ﺍﻇﮩﺎﺭ ﮐﺮ ﺭﮨﮯ ﮨﯿﮟ ﺍﺱ ﭘﺮ ﻣﯿﺮﺍ ﺧﻮﻥ ﺳﯿﺮﻭﮞ ﺑﮍﮪ ﭼﮑﺎ ﮨﮯ۔ﺩﯾﻨﮧ ﻣﯿﮟ ﻣﻮﺟﻮﺩ ﺍﻥ ﮐﮯ ﺍﯾﮏ ﺑﭽﭙﻦ ﮐﮯ ﺩﻭﺳﺖﺿﻤﯿﺮ ﺟﻨﺠﻮﻋﮧ ﮐﺎ ﮐﮩﻨﺎ ﺗﮭﺎ ﮐﮧ ﮈﺍﮐﭩﺮ ﻋﺜﻤﺎﻥ ﺟﻨﺠﻮﻋﮧ ﺍﯾﮏ ﺑﮩﺎﺩﺭ ﺁﺩﻣﯽ ﮨﮯ ﺑﭽﭙﻦ ﮨﯽ ﺳﮯ ﺍﺱ ﮐﯽ ﻋﺎﺩﺕ ﺗﮭﯽ ﮐﮧ ﺟﺐ ﺑﮭﯽ ﮐﺴﯽ ﮐﻮ ﻣﺸﮑﻞ ﺍﻭﺭ ﺗﮑﻠﯿﻒ ﻣﯿﮟ ﺩﯾﮑﮭﺘﺎ ﺗﮍﭖ ﺍﭨﮭﺘﺎ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﮐﯽ ﻣﺪﺩ ﮐﺮﺗﺎ۔ﭼﯿﻦ ﻣﯿﮟ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﮐﮯ ﺳﻔﺎﺭﺗﺨﺎﻧﮯ ﻧﮯ ﺑﮭﯽ ﺍﭘﻨﮯ ﺍﯾﮏ ﭨﻮﯾﭧ ﻣﯿﮟ ﮈﺍﮐﭩﺮ ﻋﺜﻤﺎﻥ ﮐﻮ ﺷﺎﻧﺪﺍﺭ ﺍﻟﻔﺎﻅ ﻣﯿﮟ ﺧﺮﺍﺝِ ﺗﺤﺴﯿﻦ ﭘﯿﺶ ﮐﯿﺎ ﮨﮯ۔ ﺟﺲ ﻣﯿﮟ ﮐﮩﺎ ﮨﮯ ﮐﮧ ’ ﮨﻢ ﮈﺍﮐﭩﺮ ﻋﺜﻤﺎﻥ ﺟﻨﺠﻮﻋﮧ ﮐﮯ ﺟﺬﺑﮯ ﮐﯽ ﺗﻌﺮﯾﻒ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﯿﮟ۔ ‘ﻣﻘﺎﻣﯽ ﻣﯿﮉﯾﺎ ﻣﯿﮟ ﮈﺍﮐﭩﺮ ﻋﺜﻤﺎﻥ ﺟﻨﺠﻮﻋﮧ ﮐﻮ ﮨﯿﺮﻭ ﻗﺮﺍﺭ کے طور پر پیش کر ﺭﮨﺎ ﮨﮯ۔ ﭼﯿﻦ ﮐﮯ ﻣﺨﺘﻠﻒ ﭨﯿﻠﯽ ﻭﮊﻥ ﭼﯿﻨﻠﻮﮞ، ﺍﺧﺒﺎﺭﺍﺕ ﺍﻭﺭ ﺳﻮﺷﻞ ﻣﯿﮉﯾﺎ ﭘﺮ ﺍﻥ کی خبریں ہیں.قوم اس بیٹے پر نازاں ہے.ویل ڈن ڈاکٹر عثمان.

ا

اپنا تبصرہ بھیجیں